تاثیر برق حسن جو ان کے سخن میں تھی

حسرتؔ موہانی

تاثیر برق حسن جو ان کے سخن میں تھی

حسرتؔ موہانی

MORE BY حسرتؔ موہانی

    تاثیر برق حسن جو ان کے سخن میں تھی

    اک لرزش خفی مرے سارے بدن میں تھی

    واں سے نکل کے پھر نہ فراغت ہوئی نصیب

    آسودگی کی جان تری انجمن میں تھی

    اک رنگ التفات بھی اس بے رخی میں تھا

    اک سادگی بھی اس نگہ سحر فن میں تھی

    محتاج بوئے عطر نہ تھا جسم خوب یار

    خوشبوئے دلبری تھی جو اس پیرہن میں تھی

    کچھ دل ہی بجھ گیا ہے مرا ورنہ آج کل

    کیفیت بہار کی شدت چمن میں تھی

    معلوم ہو گئی مرے دل کو راہ شوق

    وہ بات پیار کی جو ہنوز اس دہن میں تھی

    غربت کی صبح میں بھی نہیں ہے وہ روشنی

    جو روشنی کہ شام سواد وطن میں تھی

    عیش گداز دل بھی غم عاشقی میں تھا

    اک راحت لطیف بھی ضمن محن میں تھی

    اچھا ہوا کہ خاطر حسرتؔ سے ہٹ گئی

    ہیبت سی اک جو خطرۂ دار و رسن میں تھی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY