تخیل کو بری کرنے لگا ہوں

عمار اقبال

تخیل کو بری کرنے لگا ہوں

عمار اقبال

MORE BYعمار اقبال

    تخیل کو بری کرنے لگا ہوں

    میں ذہنی خود کشی کرنے لگا ہوں

    مجھے زندہ جلایا جا رہا ہے

    تو کیا میں روشنی کرنے لگا ہوں

    میں آئینوں کو دیکھے جا رہا تھا

    اب ان سے بات بھی کرنے لگا ہوں

    تمہاری بس تمہاری دشمنی میں

    میں سب سے دوستی کرنے لگا ہوں

    مجھے گمراہ کرنا غیر ممکن

    میں اپنی پیروی کرنے لگا ہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے