تلخ گزرے کہ شادماں گزرے

فرید جاوید

تلخ گزرے کہ شادماں گزرے

فرید جاوید

MORE BYفرید جاوید

    تلخ گزرے کہ شادماں گزرے

    زندگی ہو تو کیوں گراں گزرے

    تھا جہاں مدتوں سے سناٹا

    ہم وہاں سے بھی نغمہ خواں گزرے

    مرحلے سخت تھے مگر ہم لوگ

    صورت موجۂ رواں گزرے

    میرے ہی دل کی دھڑکنیں ہوں گی

    تم مرے پاس سے کہاں گزرے

    کیوں نہ ڈھل جائے میرے نغموں میں

    کیوں ترا حسن رائیگاں گزرے

    چند لمحے خیال و خواب سہی

    چند لمحے انیس جاں گزرے

    کتنے خاموش حادثے جاویدؔ

    دل ہی دل میں نہاں نہاں گزرے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY