تمام معجزے ساری شہادتیں لے کر

صابر وسیم

تمام معجزے ساری شہادتیں لے کر

صابر وسیم

MORE BYصابر وسیم

    تمام معجزے ساری شہادتیں لے کر

    میں آب و خاک سے گزرا عداوتیں لے کر

    خود اپنے حرف کے شعلے میں جل کے لوٹا ہوں

    میں اک سفر پہ گیا تھا حکایتیں لے کر

    کشاں کشاں لب ساحل اتر گئی مجھ میں

    اداس رات سمندر کی وسعتیں لے کر

    حد زمان و مکاں سے گزر رہا ہوں میں

    خود اپنے ہونے نہ ہونے کی حیرتیں لے کر

    ابھی تو زخم سلے تھے کہ آسماں سے کوئی

    مری طرف چلا آیا جراحتیں لے کر

    زمیں کے لوگو سنو حشر اب نہ اٹھے گا

    گزر گیا کوئی ساری قیامتیں لے کر

    اکیلا شہر میں پھرتا ہوں سارا دن صابرؔ

    میں اپنے بچھڑے ہوؤں کی شباہتیں لے کر

    مآخذ:

    • کتاب : siip-volume-47 (Pg. 48)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY