تنگ آ چکے ہیں کشمکش زندگی سے ہم

ساحر لدھیانوی

تنگ آ چکے ہیں کشمکش زندگی سے ہم

ساحر لدھیانوی

MORE BY ساحر لدھیانوی

    INTERESTING FACT

    پیاسا 1957

    تنگ آ چکے ہیں کشمکش زندگی سے ہم

    ٹھکرا نہ دیں جہاں کو کہیں بے دلی سے ہم

    مایوسئ مآل محبت نہ پوچھیے

    اپنوں سے پیش آئے ہیں بیگانگی سے ہم

    لو آج ہم نے توڑ دیا رشتۂ امید

    لو اب کبھی گلہ نہ کریں گے کسی سے ہم

    ابھریں گے ایک بار ابھی دل کے ولولے

    گو دب گئے ہیں بار غم زندگی سے ہم

    گر زندگی میں مل گئے پھر اتفاق سے

    پوچھیں گے اپنا حال تری بے بسی سے ہم

    اللہ رے فریب مشیت کہ آج تک

    دنیا کے ظلم سہتے رہے خامشی سے ہم

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    محمد رفیع

    محمد رفیع

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    تنگ آ چکے ہیں کشمکش زندگی سے ہم نعمان شوق

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites