تنہائی کے لمحات کا احساس ہوا ہے

نسیم شاہجہانپوری

تنہائی کے لمحات کا احساس ہوا ہے

نسیم شاہجہانپوری

MORE BY نسیم شاہجہانپوری

    تنہائی کے لمحات کا احساس ہوا ہے

    جب تاروں بھری رات کا احساس ہوا ہے

    کچھ خود بھی ہوں میں عشق میں افسردہ و غمگیں

    کچھ تلخئ حالات کا احساس ہوا ہے

    کیا دیکھیے ان تیرہ نصیبوں کا ہو انجام

    دن میں بھی جنہیں رات کا احساس ہوا ہے

    وہ ظلم بھی اب ظلم کی حد تک نہیں کرتے

    آخر انہیں کس بات کا احساس ہوا ہے

    بازی گہہ عالم میں تو اک کھیل ہے جینا

    اس کھیل میں کب مات کا احساس ہوا ہے

    رخ پر ترے بکھری ہوئی زلفوں کا یہ عالم

    دن کا تو کبھی رات کا احساس ہوا ہے

    کچھ خود بھی وہ نادم ہیں نسیمؔ اپنی جفا پر

    کچھ میری شکایات کا احساس ہوا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY