تزئین بزم غم کے لیے کوئی شے تو ہو

ہوش ترمذی

تزئین بزم غم کے لیے کوئی شے تو ہو

ہوش ترمذی

MORE BYہوش ترمذی

    تزئین بزم غم کے لیے کوئی شے تو ہو

    روشن چراغ دل نہ سہی جام مے تو ہو

    ہم تو رہین رشتۂ بے گانگی رہے

    سارے جہاں سے تیری ملاقات ہے تو ہو

    غم بھی مجھے قبول ہے لیکن بہ قدر شوق

    دل کا نصیب درد سہی پے بہ پے تو ہو

    فریاد ایک شور ہے آہنگ کے بغیر

    نالہ متاع درد سہی کوئی لے تو ہو

    یہ کیا کہ اہل شوق نہ اپنے نہ آپ کے

    یا موت یا حیات کوئی بات طے تو ہو

    ہے دور حسن سلسلۂ زیر و بم کی بات

    پہلے گداز سینہ سزاوار نے تو ہو

    ہر چند دو قدم ہی سہی منزل مراد

    یہ مختصر سی راہ مگر ہوشؔ طے تو ہو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY