تیغ کھینچے ہوئے کھڑا کیا ہے

سلمان اختر

تیغ کھینچے ہوئے کھڑا کیا ہے

سلمان اختر

MORE BYسلمان اختر

    تیغ کھینچے ہوئے کھڑا کیا ہے

    پوچھ مجھ سے مری سزا کیا ہے

    زندگی اس قدر کٹھن کیوں ہے

    آدمی کی بھلا خطا کیا ہے

    جسم تو بھی ہے جسم میں بھی ہوں

    روح اک وہم کے سوا کیا ہے

    آج بھی کل کا منتظر ہوں میں

    آج کے روز میں نیا کیا ہے

    آئیے بیٹھ کر شراب پئیں

    گو کہ اس کا بھی فائدہ کیا ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    تیغ کھینچے ہوئے کھڑا کیا ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY