تیرے ہاتھوں سے مٹے گا نقش ہستی ایک دن

منیرؔ  شکوہ آبادی

تیرے ہاتھوں سے مٹے گا نقش ہستی ایک دن

منیرؔ  شکوہ آبادی

MORE BYمنیرؔ  شکوہ آبادی

    تیرے ہاتھوں سے مٹے گا نقش ہستی ایک دن

    باڑھ رکھ دے گی چھری پر تیز دستی ایک دن

    تیری آنکھوں سے دل نازک گرے گا نشہ میں

    طاق سے شیشہ گرا دے گی یہ مستی ایک دن

    زاہدو پوجا تمہاری خوب ہوگی حشر میں

    بت بنا دے گی تمہیں یہ حق پرستی ایک دن

    آنکھیں دوزخ میں بھی سینکے گا ترا دل سوختہ

    آگ بن جائے گی یہ آتش پرستی ایک دن

    خوبیٔ شمشیر ابرو کا تماشا دیکھتے

    دونوں باگوں آپ کی تلوار کستی ایک دن

    خون میرا رائیگاں ناحق بہاتے ہیں حضور

    کرنی ہے رنگ حنا کی پیش دستی ایک دن

    جلد پستاں تک مرا کب تک نہ ہوگا دسترس

    ان ترنجوں کی بھی قیمت ہوگی سستی ایک دن

    زلف کافر کیش لپٹے گی قدم سے اے صنم

    ہندو شب بھی کرے گا بت پرستی ایک دن

    جان بخشو سر مرے لاشہ کا ٹھکراؤ کبھی

    ساغر خالی میں بھر دو شہد ہستی ایک دن

    نیل گوں کر دیں گے مل کر چھاتیاں اے رشک مہر

    تیری انگیا کی کٹوری ہوگی جستی ایک دن

    خوب کر تعریف نواب ظفر جنگ اے منیرؔ

    کام آ جائے گی یہ آقا پرستی ایک دن

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY