تیری آنکھوں میں جو نشہ ہے پذیرائی کا

گوپال متل

تیری آنکھوں میں جو نشہ ہے پذیرائی کا

گوپال متل

MORE BYگوپال متل

    تیری آنکھوں میں جو نشہ ہے پذیرائی کا

    رنگ بھر دے نہ مری زیست میں رسوائی کا

    تجھ کو افسون محبت کی ضرورت کیا تھی

    سحر کچھ کم تو نہیں تھا تری رعنائی کا

    دل تو کیا چیز ہے جاں اس پہ تصدق کر دوں

    یہ اگر عربدہ بھی ہو کسی ہرجائی کا

    سوچتا ہوں دل بیتاب پہ کیا گزرے گی

    سامنا ہو گیا گر پھر شب تنہائی کا

    کہیں ایسا نہ ہو اس لطف و مدارات کے بعد

    امتحاں ہو مرے پندار شکیبائی کا

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-gopal mittal (Pg. 183)
    • Author : Gopal Mittal
    • مطبع : Modern Publishing House, Daryaganj New delhi (1994)
    • اشاعت : 1994

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY