تیری صورت کو دیکھتا ہوں میں

داغؔ دہلوی

تیری صورت کو دیکھتا ہوں میں

داغؔ دہلوی

MORE BYداغؔ دہلوی

    تیری صورت کو دیکھتا ہوں میں

    اس کی قدرت کو دیکھتا ہوں میں

    جب ہوئی صبح آ گئے ناصح

    انہیں حضرت کو دیکھتا ہوں میں

    وہ مصیبت سنی نہیں جاتی

    جس مصیبت کو دیکھتا ہوں میں

    دیکھنے آئے ہیں جو میری نبض

    ان کی صورت کو دیکھتا ہوں میں

    موت مجھ کو دکھائی دیتی ہے

    جب طبیعت کو دیکھتا ہوں میں

    شب فرقت اٹھا اٹھا کر سر

    صبح عشرت کو دیکھتا ہوں میں

    دور بیٹھا ہوا سر محفل

    رنگ صحبت کو دیکھتا ہوں میں

    ہر مصیبت ہے بے مزا شب غم

    آفت آفت کو دیکھتا ہوں میں

    نہ محبت کو جانتے ہو تم

    نہ مروت کو دیکھتا ہوں میں

    کوئی دشمن کو یوں نہ دیکھے گا

    جیسے قسمت کو دیکھتا ہوں میں

    حشر میں داغؔ کوئی دوست نہیں

    ساری خلقت کو دیکھتا ہوں میں

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY