تیری امید کے اسباب نظر آتے نہیں

عامر سوقی

تیری امید کے اسباب نظر آتے نہیں

عامر سوقی

MORE BYعامر سوقی

    تیری امید کے اسباب نظر آتے نہیں

    کیوں مجھے کوئی حسیں خواب نظر آتے نہیں

    اتنا بھٹکا ہوں اذیت کے بیاباں میں کہ اب

    کوئی بھی لمحۂ نایاب نظر آتے نہیں

    کس قدر دھندلے ہیں مظلوم کی آہوں سے فلک

    مہر و انجم ہوں کہ مہتاب نظر آتے نہیں

    دست بردار نہیں رسم تعلق سے میں

    پھر بھلا کیوں مجھے احباب نظر آتے نہیں

    اتنی دوری ہے اب ان سے کہ مجھے اے شوقیؔ

    چین سے ہیں کہ وہ بیتاب نظر آتے نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY