تیز آندھی رات اندھیاری اکیلا راہ رو

فضیل جعفری

تیز آندھی رات اندھیاری اکیلا راہ رو

فضیل جعفری

MORE BYفضیل جعفری

    تیز آندھی رات اندھیاری اکیلا راہ رو

    بڑھ رہا ہے سوچتا ڈرتا جھجکتا راہ رو

    منزلیں سمتیں بدلتی جا رہی ہیں روز و شب

    اس بھری دنیا میں ہے انسان تنہا راہ رو

    کچھ تو ہے جو شہر میں پھرتا ہے گھبراتا ہوا

    بے خبر ورنہ بھرے جنگل سے گزرا راہ رو

    کھڑکیاں کھلنے لگیں دروازے وا ہونے لگے

    جب بھی گزرا راہ سے کوئی سجیلا راہ رو

    خضر کی سی عمر ورنہ کیسے تنہا کاٹتے

    بے سہارا راستوں کا ہیں سہارا راہ رو

    بخش ہی دے کوئی شاید گیسوؤں کی نرم چھاؤں

    ہر نئی بستی میں تھوڑی دیر ٹھہرا راہ رو

    کوئی منزل آخری منزل نہیں ہوتی فضیلؔ

    زندگی بھی ہے مثال موج دریا راہ رو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY