تھا بہانہ مجھے زنجیر کے ہل جانے کا

سراج اورنگ آبادی

تھا بہانہ مجھے زنجیر کے ہل جانے کا

سراج اورنگ آبادی

MORE BYسراج اورنگ آبادی

    تھا بہانہ مجھے زنجیر کے ہل جانے کا

    چھوڑ دیو اب تو ہوا شوق نکل جانے کا

    سنگ دل نے دل نازک کوں مرے چور کیا

    کیا ارادہ تھا اسے شیشہ محل جانے کا

    مت کرو شمع کوں بدنام جلاتی وو نہیں

    آپ سیں شوق پتنگوں کوں ہے جل جانے کا

    آفریں دل کوں مرے خوب بجا کام آیا

    سچ سپاہی کو بڑا ننگ ہے ٹل جانے کا

    شعلہ رو جام بکف بزم میں آتا ہے سراجؔ

    گردن شمع کوں کیا باک ہے ڈھل جانے کا

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyat-e-Siraj (Pg. 293)
    • Author : Siraj Aurangabadi
    • مطبع : Qaumi Council Baraye-Farogh Urdu (1982,1998)
    • اشاعت : 1982,1998

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY