ٹھہر ٹھہر کے مرا انتظار کرتا چل

غلام مرتضی راہی

ٹھہر ٹھہر کے مرا انتظار کرتا چل

غلام مرتضی راہی

MORE BY غلام مرتضی راہی

    ٹھہر ٹھہر کے مرا انتظار کرتا چل

    یہ سخت راہ بھی اب اختیار کرتا چل

    سفر کی رات ہے ہر گام احتیاط برت

    پلٹ پلٹ کے اندھیروں پہ وار کرتا چل

    لیے جا کام تو اپنی فراخ دستی سے

    قدم قدم پہ مجھے زیر بار کرتا چل

    ادھر ادھر جو کھڑے ہو گئے ہیں تیرے لیے

    انہیں بھی اپنے سفر میں شمار کرتا چل

    کسی ٹھکانے پہ تجھ کو اگر پہنچنا ہے

    تو نقش پا کا مرے اعتبار کرتا چل

    نہ کھینچ دشت و جبل بحر و بر سے قدموں کو

    یہ سب رکاوٹیں ہیں ان کو پار کرتا چل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY