تھک گیا ہے دل وحشی مرا فریاد سے بھی

پروین شاکر

تھک گیا ہے دل وحشی مرا فریاد سے بھی

پروین شاکر

MORE BY پروین شاکر

    تھک گیا ہے دل وحشی مرا فریاد سے بھی

    جی بہلتا نہیں اے دوست تری یاد سے بھی

    اے ہوا کیا ہے جو اب نظم چمن اور ہوا

    صید سے بھی ہیں مراسم ترے صیاد سے بھی

    کیوں سرکتی ہوئی لگتی ہے زمیں یاں ہر دم

    کبھی پوچھیں تو سبب شہر کی بنیاد سے بھی

    برق تھی یا کہ شرار دل آشفتہ تھا

    کوئی پوچھے تو مرے آشیاں برباد سے بھی

    بڑھتی جاتی ہے کشش وعدہ گہ ہستی کی

    اور کوئی کھینچ رہا ہے عدم آباد سے بھی

    RECITATIONS

    صبیحہ خان

    صبیحہ خان

    صبیحہ خان

    تھک گیا ہے دل وحشی مرا فریاد سے بھی صبیحہ خان

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites