تھکن کو اوڑھ کے بستر میں جا کے لیٹ گئے

منور رانا

تھکن کو اوڑھ کے بستر میں جا کے لیٹ گئے

منور رانا

MORE BYمنور رانا

    تھکن کو اوڑھ کے بستر میں جا کے لیٹ گئے

    ہم اپنی قبر مقرر میں جا کے لیٹ گئے

    تمام عمر ہم اک دوسرے سے لڑتے رہے

    مگر مرے تو برابر میں جا کے لیٹ گئے

    ہماری تشنہ نصیبی کا حال مت پوچھو

    وہ پیاس تھی کہ سمندر میں جا کے لیٹ گئے

    نہ جانے کیسی تھکن تھی کبھی نہیں اتری

    چلے جو گھر سے تو دفتر میں جا کے لیٹ گئے

    یہ بے وقوف انہیں موت سے ڈراتے ہیں

    جو خود ہی سایۂ خنجر میں جا کے لیٹ گئے

    تمام عمر جو نکلے نہ تھے حویلی سے

    وہ ایک گنبد بے در میں جا کے لیٹ گئے

    سجائے پھرتے تھے جھوٹی انا جو چہروں پر

    وہ لوگ قصر سکندر میں جا کے لیٹ گئے

    سزا ہماری بھی کاٹی ہے بال بچوں نے

    کہ ہم اداس ہوئے گھر میں جا کے لیٹ گئے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    منور رانا

    منور رانا

    مأخذ :
    • کتاب : Sukhan Sarai (Pg. 21)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے