تھم گیا درد اجالا ہوا تنہائی میں

احمد مشتاق

تھم گیا درد اجالا ہوا تنہائی میں

احمد مشتاق

MORE BY احمد مشتاق

    تھم گیا درد اجالا ہوا تنہائی میں

    برق چمکی ہے کہیں رات کی گہرائی میں

    باغ کا باغ لہو رنگ ہوا جاتا ہے

    وقت مصروف ہے کیسی چمن آرائی میں

    شہر ویران ہوئے بحر بیابان ہوئے

    خاک اڑتی ہے در و دشت کی پہنائی میں

    ایک لمحے میں بکھر جاتا ہے تانا بانا

    اور پھر عمر گزر جاتی ہے یکجائی میں

    اس تماشے میں نہیں دیکھنے والا کوئی

    اس تماشے کو جو برپا ہے تماشائی میں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    تھم گیا درد اجالا ہوا تنہائی میں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites