ٹھکانا ہے کہیں جائیں کہاں ناچار بیٹھے ہیں

امداد امام اثرؔ

ٹھکانا ہے کہیں جائیں کہاں ناچار بیٹھے ہیں

امداد امام اثرؔ

MORE BYامداد امام اثرؔ

    ٹھکانا ہے کہیں جائیں کہاں ناچار بیٹھے ہیں

    اجازت جب نہیں در کی پس دیوار بیٹھے ہیں

    یہ مطلب ہے کہ محفل میں منائے اور من جائیں

    وہ میرے چھیڑنے کو غیر سے بیزار بیٹھے ہیں

    خریدار آ رہے ہیں ہر طرف سے نقد جاں لے کر

    وہ یوسف بن کے بکنے کو سر بازار بیٹھے ہیں

    اچانک لے نہ لوں بوسہ یہ کھٹکا ان کے دل میں ہے

    مرے پہلو میں بیٹھے ہیں مگر ہشیار بیٹھے ہیں

    تمہارے عاشقوں میں بے قراری کیا ہی پھیلی ہے

    جدھر دیکھو جگر تھامے ہوئے دو چار بیٹھے ہیں

    قیامت ہے ستم مردے پہ بھی ان کو گوارا ہے

    مرا لاشہ اٹھانے کے لئے اغیار بیٹھے ہیں

    لب بام آ کے دکھلا وہ تماشا طور کا تم بھی

    بڑے موقعے سے در پر طالب دیدار بیٹھے ہیں

    اثرؔ کیوں کر نہ جانوں اس کے در کو قبلۂ عالم

    اسی جانب کئی رخ کافر و دیں دار بیٹھے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY