ٹھکانے یوں تو ہزاروں ترے جہان میں تھے

آشفتہ چنگیزی

ٹھکانے یوں تو ہزاروں ترے جہان میں تھے

آشفتہ چنگیزی

MORE BYآشفتہ چنگیزی

    ٹھکانے یوں تو ہزاروں ترے جہان میں تھے

    کوئی صدا ہمیں روکے گی اس گمان میں تھے

    عجیب بستی تھی چہرے تو اپنے جیسے تھے

    مگر صحیفے کسی اجنبی زبان میں تھے

    بہت خوشی ہوئی ترکش کے خالی ہونے پر

    ذرا جو غور کیا تیر سب کمان میں تھے

    علاج ڈھونڈھ نکالیں گے اپنی وحشت کا

    جنوں نواز ابھی تک اسی گمان میں تھے

    ہم ایک ایسی جگہ جا کے لوٹ کیوں آئے

    جہاں سنا ہے کہ سب آخری زمان میں تھے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY