طلسم گنبد بے در کسی پہ وا نہ ہوا

اختر ہوشیارپوری

طلسم گنبد بے در کسی پہ وا نہ ہوا

اختر ہوشیارپوری

MORE BYاختر ہوشیارپوری

    طلسم گنبد بے در کسی پہ وا نہ ہوا

    شرر تو لپکا مگر شعلۂ صدا نہ ہوا

    ہمیں زمانے نے کیا کیا نہ آئنے دکھلائے

    مگر وہ عکس جو آئینہ آشنا نہ ہوا

    بیاض جاں میں سبھی شعر خوبصورت تھے

    کسی بھی مصرع رنگیں کا حاشیا نہ ہوا

    نہ جانے لوگ ٹھہرتے ہیں وقت شام کہاں

    ہمیں تو گھر میں بھی رکنے کا حوصلا نہ ہوا

    وہ شہر آج بھی میرے لہو میں شامل ہے

    وہ جس سے ترک تعلق کو اک زمانا ہوا

    یہی نہیں کہ سر شب قیامتیں ٹوٹیں

    سحر کے وقت بھی ان بستیوں میں کیا نہ ہوا

    میں دشت جاں میں بھٹک کر ٹھہر گیا اخترؔ

    پھر اس کے بعد مرا کوئی راستا نہ ہوا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY