ترچھی نظر نہ ہو طرف دل تو کیا کروں

آغا حجو شرف

ترچھی نظر نہ ہو طرف دل تو کیا کروں

آغا حجو شرف

MORE BY آغا حجو شرف

    ترچھی نظر نہ ہو طرف دل تو کیا کروں

    لیلیٰ کے ناپسند ہو محمل تو کیا کروں

    ٹھہرے نہ خوں بہا سوئے قاتل تو کیا کروں

    حق ہو جو خود بخود مرا باطل تو کیا کروں

    اک رنگ کو جہاں میں نہیں کوئی مانتا

    ہر رنگ میں رہوں نہ میں شامل تو یا کروں

    پسواؤں بے گناہ جو دل کو حنا کے ساتھ

    پرسان حال ہو کوئی عادل تو کیا کروں

    پروانہ ہونے کی بھی اجازت نہیں مجھے

    عالم فریب ہے تری محفل تو کیا کروں

    جاتا گلو بریدہ بھی اڑ کر گلوں کے پاس

    بازو گیا ہے توڑ کے بسمل تو کیا کروں

    لیلہ یہ کہہ کے جلوہ دکھاتی ہے قیس کو

    اڑنے لگے جو پردۂ محمل تو کیا کروں

    خود چاہتا ہوں ضبط کروں درد شوق میں

    دل ہی مرا نہ ہو متحمل تو کیا کروں

    منہ چوم لوں کہ گرد پھروں دوڑ دوڑ کے

    اے دل جو ہاتھ روک لے قاتل تو کیا کروں

    دم راہ شوق و ذوق میں لیتا نہیں کہیں

    اس پر بھی طے نہ ہو جو یہ منزل تو کیا کروں

    کیوں کر نہ جبر دل پہ کروں اپنے اختیار

    راحت میں آ پڑے کوئی مشکل تو کیا کروں

    اک اک سے پوچھتے ہیں وہ آئینہ دیکھ کر

    معشوق پاؤں پیار کے قابل تو کیا کروں

    دے دوں میں راہ عشق میں جان اس کے نام پر

    ناچار ہوں نہ ہو کوئی سائل تو کیا کروں

    ٹانکے جگر کے زخم میں کیوں کر لگانے دوں

    گل تیرے باغ کا ہو مقابل تو کیا کروں

    آنے کو منع کرتے ہو اچھا نہ آؤں گا

    یہ تو کہو نہ مانے مرا دل تو کیا کروں

    شاید مجھے جمال دکھا دے وہ اے کلیم

    نظارے کا نہ ہوں متحمل تو کیا کروں

    مر جاؤں ڈوب کر شرفؔ اس پار یار ہے

    کشتی نہ ہو کوئی لب ساحل تو کیا کروں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY