ترے بدن سے جو چھو کر ادھر بھی آتا ہے

محسن نقوی

ترے بدن سے جو چھو کر ادھر بھی آتا ہے

محسن نقوی

MORE BYمحسن نقوی

    ترے بدن سے جو چھو کر ادھر بھی آتا ہے

    مثال رنگ وہ جھونکا نظر بھی آتا ہے

    تمام شب جہاں جلتا ہے اک اداس دیا

    ہوا کی راہ میں اک ایسا گھر بھی آتا ہے

    وہ مجھ کو ٹوٹ کے چاہے گا چھوڑ جائے گا

    مجھے خبر تھی اسے یہ ہنر بھی آتا ہے

    اجاڑ بن میں اترتا ہے ایک جگنو بھی

    ہوا کے ساتھ کوئی ہم سفر بھی آتا ہے

    وفا کی کون سی منزل پہ اس نے چھوڑا تھا

    کہ وہ تو یاد ہمیں بھول کر بھی آتا ہے

    جہاں لہو کے سمندر کی حد ٹھہرتی ہے

    وہیں جزیرۂ لعل و گہر بھی آتا ہے

    چلے جو ذکر فرشتوں کی پارسائی کا

    تو زیر بحث مقام بشر بھی آتا ہے

    ابھی سناں کو سنبھالے رہیں عدو میرے

    کہ ان صفوں میں کہیں میرا سر بھی آتا ہے

    کبھی کبھی مجھے ملنے بلندیوں سے کوئی

    شعاع صبح کی صورت اتر بھی آتا ہے

    اسی لیے میں کسی شب نہ سو سکا محسنؔ

    وہ ماہتاب کبھی بام پر بھی آتا ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ترے بدن سے جو چھو کر ادھر بھی آتا ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY