ترے فرق ناز پہ تاج ہے مرے دوش غم پہ گلیم ہے

مجید امجد

ترے فرق ناز پہ تاج ہے مرے دوش غم پہ گلیم ہے

مجید امجد

MORE BY مجید امجد

    ترے فرق ناز پہ تاج ہے مرے دوش غم پہ گلیم ہے

    تری داستاں بھی عظیم ہے مری داستاں بھی عظیم ہے

    مری کتنی سوچتی صبحوں کو یہ خیال زہر پلا گیا

    کسی تپتے لمحے کی آہ ہے کہ خرام موج نسیم ہے

    تہ خاک کرمک دانہ جو بھی شریک رقص حیات ہے

    نہ بس ایک جلوۂ طور ہے نہ بس ایک شوق کلیم ہے

    یہ ہر ایک سمت مسافتوں میں گندھی پڑی ہیں جو ساعتیں

    تری زندگی مری زندگی انہی موسموں کی شمیم ہے

    کہیں محملوں کا غبار اڑے کہیں منزلوں کے دئے جلیں

    خم آسماں رہ کارواں نہ مقام ہے نہ مقیم ہے

    حرم اور دیر فسانہ ہے یہی جلتی سانس زمانہ ہے

    یہی گوشۂ دل ناصبور ہی کنج باغ نعیم ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY