ترے کرم سے خدائی میں یوں تو کیا نہ ملا

ن م راشد

ترے کرم سے خدائی میں یوں تو کیا نہ ملا

ن م راشد

MORE BYن م راشد

    ترے کرم سے خدائی میں یوں تو کیا نہ ملا

    مگر جو تو نہ ملا زیست کا مزا نہ ملا

    حیات شوق کی یہ گرمیاں کہاں ہوتیں

    خدا کا شکر ہمیں نالۂ رسا نہ ملا

    ازل سے فطرت آزاد ہی تھی آوارہ

    یہ کیوں کہیں کہ ہمیں کوئی رہنما نہ ملا

    یہ کائنات کسی کا غبار راہ سہی

    دلیل راہ جو بنتا وہ نقش پا نہ ملا

    یہ دل شہید فریب نگاہ ہو نہ سکا

    وہ لاکھ ہم سے بہ انداز محرمانہ ملا

    کنار موج میں مرنا تو ہم کو آتا ہے

    نشان ساحل الفت ملا ملا نہ ملا

    تری تلاش ہی تھی مایۂ بقائے وجود

    بلا سے ہم کو سر منزل بقا نہ ملا

    مآخذ:

    • کتاب : Karwaan-e-Ghazal (Pg. 96)
    • Author : Farooq Argali
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY