ترے مژگاں کی فوجیں باندھ کر صف جب ہوئیں کھڑیاں

تاباں عبد الحی

ترے مژگاں کی فوجیں باندھ کر صف جب ہوئیں کھڑیاں

تاباں عبد الحی

MORE BY تاباں عبد الحی

    ترے مژگاں کی فوجیں باندھ کر صف جب ہوئیں کھڑیاں

    کیا عالم کو سارے قتل لو تھیں ہر طرف پڑیاں

    دم اپنے کا شمار اس طرح تیرے غم میں کرتا ہوں

    کہ جیسے شیشۂ ساعت میں گنتا ہے کوئی گھڑیاں

    ہمیں کو خانۂ زنجیر سے الفت ہے زنداں میں

    وگرنہ ایک جھٹکے میں جدا ہو جائیں سب کڑیاں

    تجھے دیکھا ہے جب سے بلبل و گل نے گلستاں میں

    پڑی ہیں رشتۂ الفت میں ان کے تب سے گل چھڑیاں

    فغاں آتا نہیں وہ شوخ میرے ہاتھ اے تاباںؔ

    لکیریں انگلیوں کی مٹ گئیں گنتے ہوے گھڑیاں

    مآخذ:

    Deewan-e-Taban Rekhta Website)
    • Deewan-e-Taban Rekhta Website)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY