تری تلاش میں ہے سائبان بھی ہم بھی

نبیل احمد نبیل

تری تلاش میں ہے سائبان بھی ہم بھی

نبیل احمد نبیل

MORE BYنبیل احمد نبیل

    تری تلاش میں ہے سائبان بھی ہم بھی

    ہمارے ساتھ ہماری تھکان بھی ہم بھی

    فلک کو چھونے کی خواہش ہزار دل میں لیے

    کہ سرگراں ہے ہماری اڑان بھی ہم بھی

    ہے انتظار میں برسوں سے رہنماؤں کے

    ہماری منزل جاں کا نشان بھی ہم بھی

    وہی ہے نوک سنان ستم گران جہاں

    وہی ہے کرب و بلا امتحان بھی ہم بھی

    اسی کا نام لیے جائیں گے قیامت تک

    ہمارے ساتھ رہے گی اذان بھی ہم بھی

    تلاش منزل ہستی میں اک زمانہ ہوا

    بھٹکتے پھرتے ہیں سب کاروان بھی ہم بھی

    اسی پرانی کہانی پہ ہم جیے جائیں

    وہی حوالے وہی داستان بھی ہم بھی

    نبیلؔ روز ازل سے تھے جیسے ویسے ہیں

    ستم گروں کے ستم ہیں لگان بھی ہم بھی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY