توڑ لیں گے ہر اک شے سے رشتہ توڑ دینے کی نوبت تو آئے

ساحر لدھیانوی

توڑ لیں گے ہر اک شے سے رشتہ توڑ دینے کی نوبت تو آئے

ساحر لدھیانوی

MORE BY ساحر لدھیانوی

    توڑ لیں گے ہر اک شے سے رشتہ توڑ دینے کی نوبت تو آئے

    ہم قیامت کے خود منتظر ہیں پر کسی دن قیامت تو آئے

    ہم بھی سقراط ہیں عہد نو کے تشنہ لب ہی نہ مر جائیں یارو

    زہر ہو یا مئے آتشیں ہو کوئی جام شہادت تو آئے

    ایک تہذیب ہے دوستی کی ایک معیار ہے دشمنی کا

    دوستوں نے مروت نہ سیکھی دشمنوں کو عداوت تو آئے

    رند رستے میں آنکھیں بچھائیں جو کہے بن سنے مان جائیں

    ناصح نیک طینت کسی شب سوئے کوئے ملامت تو آئے

    علم و تہذیب تاریخ و منطق لوگ سوچیں گے ان مسئلوں پر

    زندگی کے مشقت کدے میں کوئی عہد فراغت تو آئے

    کانپ اٹھیں قصر شاہی کے گنبد تھرتھرائے زمیں معبدوں کی

    کوچہ گردوں کی وحشت تو جاگے غم زدوں کو بغاوت تو آئے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    توڑ لیں گے ہر اک شے سے رشتہ توڑ دینے کی نوبت تو آئے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY