تحفۂ عہد وفا دیجئے آپ

ابرار احمد کاشف

تحفۂ عہد وفا دیجئے آپ

ابرار احمد کاشف

MORE BYابرار احمد کاشف

    تحفۂ عہد وفا دیجئے آپ

    بے وفا ہوں تو سزا دیجئے آپ

    ہم نے رکھا ہے ہواؤں کا بھرم

    ہم چراغوں کو دعا دیجئے آپ

    آج کل نیند بہت آتی ہے

    میری آنکھوں کو سزا دیجئے آپ

    ربط کچھ تو ہو مراسم کے لئے

    مجھ پہ الزام لگا دیجئے آپ

    رسم تنقید چل رہی ہے یہاں

    رسم تائید اٹھا دیجئے آپ

    پھر میں اٹھا ہوں نیا عزم لئے

    پھر کوئی زخم نیا دیجئے آپ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY