تجھ قید سے دل ہو کر آزاد بہت رویا

محمد رفیع سودا

تجھ قید سے دل ہو کر آزاد بہت رویا

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    تجھ قید سے دل ہو کر آزاد بہت رویا

    لذت کو اسیری کی کر یاد بہت رویا

    تصویر مری تجھ بن مانیؔ نے جو کھینچی تھی

    انداز سمجھ اس کا بہزادؔ بہت رویا

    نالے نے ترے بلبل نم چشم نہ کی گل کی

    فریاد مری سن کر صیاد بہت رویا

    جوئیں پڑی بہتی ہیں جا دیکھ گلستاں میں

    تجھ قد سے خجل ہو کر شمشاد بہت رویا

    آئینہ جو پانی میں ہے غرق یہ باعث ہے

    تجھ سخت دلی آگے فولاد بہت رویا

    یاں تک مرے مشہد سے ہے تشنہ لبی پیدا

    اس سمت جو ہو گزرا جلاد بہت رویا

    سوداؔ سے یہ میں پوچھا دل میں بھی کسی کو دوں

    وہ کر کے بیاں اپنی روداد بہت رویا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY