تجھ سے مل کر تو یہ لگتا ہے کہ اے اجنبی دوست

احمد فراز

تجھ سے مل کر تو یہ لگتا ہے کہ اے اجنبی دوست

احمد فراز

MORE BY احمد فراز

    تجھ سے مل کر تو یہ لگتا ہے کہ اے اجنبی دوست

    تو مری پہلی محبت تھی مری آخری دوست

    لوگ ہر بات کا افسانہ بنا دیتے ہیں

    یہ تو دنیا ہے مری جاں کئی دشمن کئی دوست

    تیرے قامت سے بھی لپٹی ہے امر بیل کوئی

    میری چاہت کو بھی دنیا کی نظر کھا گئی دوست

    یاد آئی ہے تو پھر ٹوٹ کے یاد آئی ہے

    کوئی گزری ہوئی منزل کوئی بھولی ہوئی دوست

    اب بھی آئے ہو تو احسان تمہارا لیکن

    وہ قیامت جو گزرنی تھی گزر بھی گئی دوست

    تیرے لہجے کی تھکن میں ترا دل شامل ہے

    ایسا لگتا ہے جدائی کی گھڑی آ گئی دوست

    بارش سنگ کا موسم ہے مرے شہر میں تو

    تو یہ شیشے سا بدن لے کے کہاں آ گئی دوست

    میں اسے عہد شکن کیسے سمجھ لوں جس نے

    آخری خط میں یہ لکھا تھا فقط آپ کی دوست

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    تجھ سے مل کر تو یہ لگتا ہے کہ اے اجنبی دوست نعمان شوق

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY