Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

تجھے میں ملوں تو کہاں ملوں مرا تجھ سے ربط محال ہے

سجاد باقر رضوی

تجھے میں ملوں تو کہاں ملوں مرا تجھ سے ربط محال ہے

سجاد باقر رضوی

MORE BYسجاد باقر رضوی

    تجھے میں ملوں تو کہاں ملوں مرا تجھ سے ربط محال ہے

    تری بزم بزم نشاط ہے مری بزم بزم خیال ہے

    ترا دل نہیں ترے ہاتھ میں مجھے دیکھ میں ہوں گرفتہ دل

    مرا جبر میری نجات ہے یہ مرے ہنر کا کمال ہے

    نہ تو ہم زباں نہ تو ہم زماں مرا تجھ سے کیسا معاملہ

    مرا عہد عہد کمال غم ترا عہد عہد زوال ہے

    میں ہوں کم طلب تو ہے کم نظر میں نوائے دل تو ہوائے دل

    مری دسترس میں ہیں کل زماں تو اسیر لمحۂ حال ہے

    وہ ہے نقد زر تری آرزو یہ ہے نقد دل مری آرزو

    ترا نقد رزق حرام ہے مرا نقد رزق حلال ہے

    تری جستجو مری گمرہی تری انتہا مری ابتدا

    تری زیست تیرا جواب ہے مری زیست میرا سوال ہے

    تجھے کاروبار کو دن ملا مجھے کاہش شب غم ملی

    مجھے خواہش غم آگہی تجھے خواہش زر و مال ہے

    مجھے سن ترانۂ درد میں مجھے دیکھ چہرۂ زرد میں

    مجھے ڈھونڈ غم کی پناہ میں کہ وہ میرا شامل حال ہے

    میں ہوں باقرؔ ایسے مقام پر نہیں کم نظر کا جہاں گزر

    یہ عجیب منزل شوق ہے کہ نہ ہجر ہے نہ وصال ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Baqir (Pg. 219)
    • Author : Sajjad Baqir Rizvi
    • مطبع : Sayyed Mohammad Ali Anjum Rizvi (2010)
    • اشاعت : 2010
    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے