تم بھی رہنے لگے خفا صاحب

مومن خاں مومن

تم بھی رہنے لگے خفا صاحب

مومن خاں مومن

MORE BYمومن خاں مومن

    تم بھی رہنے لگے خفا صاحب

    کہیں سایہ مرا پڑا صاحب

    ہے یہ بندہ ہی بے وفا صاحب

    غیر اور تم بھلے بھلا صاحب

    کیوں الجھتے ہو جنبش لب سے

    خیر ہے میں نے کیا کیا صاحب

    کیوں لگے دینے خط آزادی

    کچھ گنہ بھی غلام کا صاحب

    ہائے ری چھیڑ رات سن سن کے

    حال میرا کہا کہ کیا صاحب

    دم آخر بھی تم نہیں آتے

    بندگی اب کہ میں چلا صاحب

    ستم آزار ظلم و جور و جفا

    جو کیا سو بھلا کیا صاحب

    کس سے بگڑے تھے کس پہ غصہ تھا

    رات تم کس پہ تھے خفا صاحب

    کس کو دیتے تھے گالیاں لاکھوں

    کس کا شب ذکر خیر تھا صاحب

    نام عشق بتاں نہ لو مومنؔ

    کیجئے بس خدا خدا صاحب

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY