تم غیر سے ملو نہ ملو میں تو چھوڑ دوں (ردیف .. ے)

میر تسکینؔ دہلوی

تم غیر سے ملو نہ ملو میں تو چھوڑ دوں (ردیف .. ے)

میر تسکینؔ دہلوی

MORE BYمیر تسکینؔ دہلوی

    تم غیر سے ملو نہ ملو میں تو چھوڑ دوں

    گر اس وفا پہ کوئی کہے بے وفا مجھے

    سچ ہے تو بدگماں ہے سمجھتا ہے کچھ کا کچھ

    بوسہ نہ لینا تھا ترے آئینے کا مجھے

    انصاف کر خراب نہ پھرتا میں در بدر

    ملتی جو تیرے گوشۂ خاطر میں جا مجھے

    اس بت کی میں دکھاؤں گا تصویر واعظو

    پھر کیا کہے گا داور روز جزا مجھے

    کیوں ان سے وقت قتل کیا شکوہ غیر کا

    کرنی تھی مغفرت ہی کی اپنی دعا مجھے

    پوچھے جو تجھ سے کوئی کہ تسکیںؔ سے کیوں ملا

    کہہ دیجو حال دیکھ کے رحم آ گیا مجھے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY