تم اتنا جو مسکرا رہے ہو

کیفی اعظمی

تم اتنا جو مسکرا رہے ہو

کیفی اعظمی

MORE BY کیفی اعظمی

    INTERESTING FACT

    Fim: Arth (1982)

    تم اتنا جو مسکرا رہے ہو

    کیا غم ہے جس کو چھپا رہے ہو

    آنکھوں میں نمی ہنسی لبوں پر

    کیا حال ہے کیا دکھا رہے ہو

    بن جائیں گے زہر پیتے پیتے

    یہ اشک جو پیتے جا رہے ہو

    جن زخموں کو وقت بھر چلا ہے

    تم کیوں انہیں چھیڑے جا رہے ہو

    ریکھاؤں کا کھیل ہے مقدر

    ریکھاؤں سے مات کھا رہے ہو

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    جگجیت سنگھ

    جگجیت سنگھ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY