تم خفا ہو تو اچھا خفا ہو

بیدم شاہ وارثی

تم خفا ہو تو اچھا خفا ہو

بیدم شاہ وارثی

MORE BYبیدم شاہ وارثی

    تم خفا ہو تو اچھا خفا ہو

    اے بتو کیا کسی کے خدا ہو

    اپنے مستوں کی خیرات ساقی

    ایک ساغر مجھے بھی عطا ہو

    کچھ رہا بھی ہے بیمار غم میں

    اب دوا ہو تو کس کی دوا ہو

    آؤ مل لو شب وعدہ آ کر

    صبح تک پھر خدا جانے کیا ہو

    تو نے مجھ کو کہیں کا نہ رکھا

    اے دل زار تیرا برا ہو

    غصے میں بھی رہا پاس دشمن

    کہہ رہے ہیں کہ تیرا بھلا ہو

    تم کو بیدمؔ ہمیں جانتے ہیں

    پارسا ہو بڑے پارسا ہو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے