تو ہے معنی پردۂ الفاظ سے باہر تو آ

فضا ابن فیضی

تو ہے معنی پردۂ الفاظ سے باہر تو آ

فضا ابن فیضی

MORE BYفضا ابن فیضی

    تو ہے معنی پردۂ الفاظ سے باہر تو آ

    ایسے پس منظر میں کیا رہنا سر منظر تو آ

    آج کے سارے حقائق واہموں کی زد میں ہیں

    ڈھالنا ہے تجھ کو خوابوں سے کوئی پیکر تو آ

    تو سہی اک عکس لیکن یہ حصار آئنہ

    لوگ تجھ کو دیکھنا چاہیں برون در تو آ

    ذائقہ زخموں کا یوں کیسے سمجھ میں آئے گا

    پھینکنا ہے بند پانی میں کوئی پتھر تو آ

    جسم خاکی تجھ کو شیشے کی حویلی ہی سہی

    اے چراغ جاں کبھی فانوس کے باہر تو آ

    اس جگہ آہنگ میں ڈھلتی ہیں دل کی دھڑکنیں

    آ مرے گہوارۂ احساس کے اندر تو آ

    بارہا جی میں یہ آئی عمر رفتہ سے کہوں

    شام ہونے کو ہے اے بھولے مسافر گھر تو آ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY