اڑنے کی آرزو میں ہوا سے لپٹ گیا

نصرت مہدی

اڑنے کی آرزو میں ہوا سے لپٹ گیا

نصرت مہدی

MORE BYنصرت مہدی

    اڑنے کی آرزو میں ہوا سے لپٹ گیا

    پتا وہ اپنی شاخ کے رشتوں سے کٹ گیا

    خود میں رہا تو ایک سمندر تھا یہ وجود

    خود سے الگ ہوا تو جزیروں میں بٹ گیا

    اندھے کنویں میں بند گھٹن چیختی رہی

    چھو کر منڈیر جھونکا ہوا کا پلٹ گیا

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY