افق تک میرا صحرا کھل رہا ہے

یاسمین حمید

افق تک میرا صحرا کھل رہا ہے

یاسمین حمید

MORE BYیاسمین حمید

    افق تک میرا صحرا کھل رہا ہے

    کہیں دریا سے دریا مل رہا ہے

    لباس ابر نے بھی رنگ بدلا

    زمیں کا پیرہن بھی سل رہا ہے

    اسی تخلیق کی آسودگی میں

    بہت بے چین میرا دل رہا ہے

    کسی کے نرم لہجے کا قرینہ

    مری آواز میں شامل رہا ہے

    میں اب اس حرف سے کترا رہی ہوں

    جو میری بات کا حاصل رہا ہے

    کسی کے دل کی ناہمواریوں پر

    سنبھلنا کس قدر مشکل رہا ہے

    RECITATIONS

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    ufaq tak mra sehra khil raha hai عذرا نقوی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY