اجڑے دل و دماغ کو آباد کر سکوں

سہیل احمد زیدی

اجڑے دل و دماغ کو آباد کر سکوں

سہیل احمد زیدی

MORE BYسہیل احمد زیدی

    اجڑے دل و دماغ کو آباد کر سکوں

    ایسا تو کچھ کیا نہیں جو یاد کر سکوں

    آخر کو آدمی ہوں کبھی چاہتا ہے دل

    خود کو ترے خیال سے آزاد کر سکوں

    کھولے زبان وہ جو اسے جانتا نہ ہو

    میرا تو منہ نہیں ہے کہ فریاد کر سکوں

    اک عمر کٹ گئی مگر اب تک ہے جستجو

    دن کاٹنے کا فن کوئی ایجاد کر سکوں

    اپنے ہی غم غلط ہوں سخن سے بہت ہے یہ

    ایسا ہنر کہاں کہ اسے شاد کر سکوں

    برباد ہو کے لوٹنے والا ہوں میں سہیلؔ

    آیا تھا یوں کہ دہر کو آباد کر سکوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY