اجلا ترا برتن ہے اور صاف ترا پانی

احمد مشتاق

اجلا ترا برتن ہے اور صاف ترا پانی

احمد مشتاق

MORE BYاحمد مشتاق

    اجلا ترا برتن ہے اور صاف ترا پانی

    اک عمر کا پیاسا ہوں مجھ کو بھی پلا پانی

    ہے اک خط نادیدہ دریائے محبت میں

    ہوتا ہے جہاں آ کر پانی سے جدا پانی

    دونوں ہی تو سچے تھے الزام کسے دیتے

    کانوں نے کہا صحرا آنکھوں نے سنا پانی

    کیا کیا نہ ملی مٹی کیا کیا نہ دھواں پھیلا

    کالا نہ ہوا سبزہ میلا نہ ہوا پانی

    جب شام اترتی ہے کیا دل پہ گزرتی ہے

    ساحل نے بہت پوچھا خاموش رہا پانی

    پھر دیکھ کہ یہ دنیا کیسی نظر آتی ہے

    مشتاقؔ مئے غم میں تھوڑا سا ملا پانی

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY