امیدیں مٹ گئیں اب ہم نفس کیا

صفیہ شمیم

امیدیں مٹ گئیں اب ہم نفس کیا

صفیہ شمیم

MORE BYصفیہ شمیم

    امیدیں مٹ گئیں اب ہم نفس کیا

    نشیمن کی خوشی رنج قفس کیا

    بسر کانٹوں میں ہو جب زندگانی

    بہار خندۂ گل یک نفس کیا

    مری دیوانگی کیوں بڑھ رہی ہے

    بہار آئی چمن میں ہم نفس کیا

    نہ ہو جب رنگ آزادی چمن میں

    تو پھر اندیشۂ قید قفس کیا

    بہار نو کی پھر ہے آمد آمد

    چمن اجڑا کوئی پھر ہم نفس کیا

    مأخذ :
    • کتاب : Jadeed Shora-e-Urdu (Pg. 985)
    • Author : Dr. Abdul Wahid
    • مطبع : Feroz sons Printers Publishers and Stationers

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY