عمر بھر کچھ خواب دل پر دستکیں دیتے رہے

بقا بلوچ

عمر بھر کچھ خواب دل پر دستکیں دیتے رہے

بقا بلوچ

MORE BY بقا بلوچ

    عمر بھر کچھ خواب دل پر دستکیں دیتے رہے

    ہم کہ مجبور وفا تھے آہٹیں سنتے رہے

    جب تخیل استعاروں میں ڈھلا تو شہر میں

    دیر تک حسن بیاں کے تذکرے ہوتے رہے

    دیپ یادوں کے جلے تو ایک بے چینی رہی

    اتنی بے چینی کہ شب بھر کروٹیں لیتے رہے

    ایک الجھن رات دن پلتی رہی دل میں کہ ہم

    کس نگر کی خاک تھے کس دشت میں ٹھہرے رہے

    ہم بقاؔ اک ریت کی چادر کو اوڑھے دیر تک

    دشت ماضی کے سنہرے خواب میں کھوئے رہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY