aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

عمر کی ساری تھکن لاد کے گھر جاتا ہوں

انجم سلیمی

عمر کی ساری تھکن لاد کے گھر جاتا ہوں

انجم سلیمی

MORE BYانجم سلیمی

    عمر کی ساری تھکن لاد کے گھر جاتا ہوں

    رات بستر پہ میں سوتا نہیں مر جاتا ہوں

    اکثر اوقات بھرے شہر کے سناٹے میں

    اس قدر زور سے ہنستا ہوں کہ ڈر جاتا ہوں

    مجھ سے پوچھے تو سہی آئینہ خانہ میرا

    خال و خد لے کے میں ہم راہ کدھر جاتا ہوں

    دل ٹھہر جاتا ہے بھولی ہوئی منزل میں کہیں

    میں کسی دوسرے رستے سے گزر جاتا ہوں

    سہما رہتا ہوں بہت حلقۂ احباب میں میں

    چار دیوار میں آتے ہی بکھر جاتا ہوں

    میرے آنے کی خبر صرف دیا رکھتا ہے

    میں ہواؤں کی طرح ہو کے گزر جاتا ہوں

    میں نے جو اپنے خلاف آپ گواہی دی ہے

    وہ ترے حق میں نہیں ہے تو مکر جاتا ہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے