ان کا خیال ہر طرف ان کا جمال ہر طرف

شمس الرحمن فاروقی

ان کا خیال ہر طرف ان کا جمال ہر طرف

شمس الرحمن فاروقی

MORE BYشمس الرحمن فاروقی

    ان کا خیال ہر طرف ان کا جمال ہر طرف

    حیرت جلوہ رو بہ رو دست سوال ہر طرف

    مجھ سے شکستہ پا سے ہے شہر کی تیرے آبرو

    چھوڑ گئے مرے قدم نقش کمال ہر طرف

    ہم ہیں جواں بھی پیر بھی ہم ہیں عدم بھی زیست بھی

    ہم ہیں اسیر حلقۂ قول محال ہر طرف

    نغمہ گرا ہے بوند بوند پھر بھی اٹھی ہے کتنی گونج

    اڑتی پھرے ہے ذہن میں گرد خیال ہر طرف

    قلب حیات و موت سے مل نہ سکا کوئی جواب

    پھینکا کیے ہیں گرچہ ہم سنگ سوال ہر طرف

    مآخذ:

    • کتاب : Ganj e Sokhta (Pg. 58)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY