ان کے اک جاں نثار ہم بھی ہیں

داغؔ دہلوی

ان کے اک جاں نثار ہم بھی ہیں

داغؔ دہلوی

MORE BYداغؔ دہلوی

    ان کے اک جاں نثار ہم بھی ہیں

    ہیں جہاں سو ہزار ہم بھی ہیں

    تم بھی بے چین ہم بھی ہیں بے چین

    تم بھی ہو بے قرار ہم بھی ہیں

    اے فلک کہہ تو کیا ارادہ ہے

    عیش کے خواست گار ہم بھی ہیں

    کھینچ لائے گا جذب دل ان کو

    ہمہ تن انتظار ہم بھی ہیں

    بزم دشمن میں لے چلا ہے دل

    کیسے بے اختیار ہم بھی ہیں

    شہر خالی کئے دکاں کیسی

    ایک ہی بادہ خوار ہم بھی ہیں

    شرم سمجھے ترے تغافل کو

    واہ کیا ہوشیار ہم بھی ہیں

    ہاتھ ہم سے ملاؤ اے موسیٰ

    عاشق روئے یار ہم بھی ہیں

    خواہش بادۂ طہور نہیں

    کیسے پرہیزگار ہم بھی ہیں

    تم اگر اپنی گوں کے ہو معشوق

    اپنے مطلب کے یار ہم بھی ہیں

    جس نے چاہا پھنسا لیا ہم کو

    دلبروں کے شکار ہم بھی ہیں

    آئی مے خانے سے یہ کس کی صدا

    لاؤ یاروں کے یار ہم بھی ہیں

    لے ہی تو لے گی دل نگاہ تری

    ہر طرح ہوشیار ہم بھی ہیں

    ادھر آ کر بھی فاتحہ پڑھ لو

    آج زیر مزار ہم بھی ہیں

    غیر کا حال پوچھئے ہم سے

    اس کے جلسے کے یار ہم بھی ہیں

    کون سا دل ہے جس میں داغؔ نہیں

    عشق میں یادگار ہم بھی ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY