ان کی دیرینہ ملاقات جو یاد آتی ہے

سید مبین علوی خیرآبادی

ان کی دیرینہ ملاقات جو یاد آتی ہے

سید مبین علوی خیرآبادی

MORE BYسید مبین علوی خیرآبادی

    ان کی دیرینہ ملاقات جو یاد آتی ہے

    چشم تر صورت پیمانہ چھلک جاتی ہے

    دل میں آتے ہی سر شام تصور تیرا

    رات ساری مری آنکھوں میں گزر جاتی ہے

    یہ جنوں ہے کہ محبت کی علامت کوئی

    تیری صورت مجھے ہر شے میں نظر آتی ہے

    ساقیا جس پہ نوازش ہو کرم ہو تیرا

    اس کے ہر جام کی تاثیر بدل جاتی ہے

    جب بھی پلکوں پہ چمک جاتے ہیں یادوں کے چراغ

    نبض کچھ دیر زمانے کی ٹھہر جاتی ہے

    یہ بھی اک ان کی نگاہوں کا کرشمہ ہے مبینؔ

    زندگی خواب کی صورت میں نظر آتی ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Pirahn-e-harf (Pg. 46)
    • Author : Mubeen Alvi Khairabadi
    • مطبع : Mubeen Alvi Khairabadi (1999)
    • اشاعت : 1999

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے