ان رس بھری آنکھوں میں حیا کھیل رہی ہے

اختر شیرانی

ان رس بھری آنکھوں میں حیا کھیل رہی ہے

اختر شیرانی

MORE BYاختر شیرانی

    ان رس بھری آنکھوں میں حیا کھیل رہی ہے

    دو زہر کے پیالوں پہ قضا کھیل رہی ہے

    ہیں نرگس و گل کس لیے مسحور تماشا

    گلشن میں کوئی شوخ ادا کھیل رہی ہے

    اس بزم میں جائیں تو یہ کہتی ہیں ادائیں

    کیوں آئے ہو، کیا سر پہ قضا کھیل رہی ہے

    اس چشم سیہ مست پہ گیسو ہیں پریشاں

    میخانے پہ گھنگھور گھٹا کھیل رہی ہے

    بد مستی میں تم نے انہیں کیا کہہ دیا اخترؔ

    کیوں شوخ نگاہوں میں حیا کھیل رہی ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyat-e-Akhtar shirani (Pg. 258)
    • Author : Gopal Mittal
    • مطبع : Modern Publishing House (1997)
    • اشاعت : 1997

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY