Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

اس کا لہجہ کتاب جیسا ہے

جاذب قریشی

اس کا لہجہ کتاب جیسا ہے

جاذب قریشی

MORE BYجاذب قریشی

    اس کا لہجہ کتاب جیسا ہے

    اور وہ خود گلاب جیسا ہے

    دھوپ ہو چاندنی ہو بارش ہو

    ایک چہرہ کہ خواب جیسا ہے

    بے ہنر شہرتوں کے جنگل میں

    سنگ بھی آفتاب جیسا ہے

    بھول جاؤ گے خال و خد اپنے

    آئنہ بھی سراب جیسا ہے

    وصل کے رنگ بھی بدلتے تھے

    ہجر بھی انقلاب جیسا ہے

    یاد رکھنا بھی تجھ کو سہل نہ تھا

    بھولنا بھی عذاب جیسا ہے

    بے ستارہ ہے آسماں تجھ بن

    اور سمندر سراب جیسا ہے

    مأخذ:

    Shanasai (Pg. B-88 E-89)

    • مصنف: جاذب قریشی
      • اشاعت: 1973-1954
      • ناشر: مکتبہ کامران، کراچی
      • سن اشاعت: 1973

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے