اس کے ہر رنگ سے کیوں شعلہ زنی ہوتی ہے

جوشؔ ملسیانی

اس کے ہر رنگ سے کیوں شعلہ زنی ہوتی ہے

جوشؔ ملسیانی

MORE BY جوشؔ ملسیانی

    اس کے ہر رنگ سے کیوں شعلہ زنی ہوتی ہے

    ان کی تصویر تو کاغذ کی بنی ہوتی ہے

    عقل و مذہب کی جب آپس میں ٹھنی ہوتی ہے

    پھر تو ہر راہ بری راہزنی ہوتی ہے

    یاد آتی ہے جب ان کی نگہ ناز مجھے

    ایک برچھی مرے سینے پہ تنی ہوتی ہے

    کس طرح دور ہوں آلام غریب الوطنی

    زندگی خود بھی غریب الوطنی ہوتی ہے

    پھل اسے آئے نہ آئے یہ مقدر کی ہے بات

    چھاؤں تو نخل تمنا کی گھنی ہوتی ہے

    شکوے توقیر محبت بھی ہوا کرتے ہیں

    مگر اس وقت جب آپس میں بنی ہوتی ہے

    میں بھی پیتا ہوں مجھے اس سے کچھ انکار نہیں

    وہ مگر دامن تقویٰ میں چھنی ہوتی ہے

    ضبط گریہ سے کہیں چاک نہ ہو جائے جگر

    بوند آنسو کی بھی ہیرے کی کنی ہوتی ہے

    اک تمہاری ہی نزاکت ہے جو ہے تم پہ گراں

    ورنہ ہر پھول میں نازک بدنی ہوتی ہے

    اس قدر غیر ہے کیوں حال تمہارا اے جوشؔ

    کبھی دل پر تو کبھی دم پہ بنی ہوتی ہے

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY